Monday, July 30, 2012

I مینڈک کہانی



کنویں کا مینڈک کنویں سے باہر نکل چکا ہے۔ پریشان تو زیادہ نہیں پر کبھی کبھی باہر کی دنیا دیکھ کر گھبرا سا جاتا ہے۔ کنوں اچھا تھا پر اسکو دنیا دیکھنی تھی۔ اب کنویں میں رہنے والے مینڈک اکیلے پڑ گئے ہیں۔ کچھ باہر سر نکال کر کبھی کبھار دیکھتے تو ہیں پر دل میں باہر آنے کی خواہش نہیں رکھتے۔ کنویں کے باھر کی دنیا سے کچھ خوفزدہ لگتے ہیں۔ انکو شائد کچھ ڈر سا ہے کہ اگر وہ باہر نکلے تو کہیں انکا ٹھکانہ نہ چھوٹ جائے۔ اپنا ٹھکانہ تو سب کو پیارا ہوتا ہے۔ پر باہر کی دنیا بھی دیکھنے میں بہت عجیب لگتی ہے۔ ٹھکانا چھوٹ جانے کا خوف اور باہر کی دنیا کی رنگینیاں بہت حسین لگتی ہیں۔ ٹھکانا چھوٹ جان کا خوف اور باہر کی دنیا کی رنگینیاں عجیب کشمکش میں ڈالے ہوئے ہیں۔

نہ کنویں سے نکل جانے والا مینڈک مطمئن ہے اور نہ ہئ پیچھے رہ جانے والے۔ وہ سب شائد خوش تو ہیں، اپنی اپنی جگہ، لیکن مطمئن نہیں ہیں، عجیب و غریب حالات ہیں۔ کنویں سے نکل جانے واا مینڈک خود کو باہر کی دنیا کے مطابق تبدیل کرنے میں مصروف ہے اور پیچھے رہ جانے والے مینڈک کچھ کچھ باہرنکل جانے والے مینڈک کے رنگ ڈھنگ میں ڈھلنے میں مصروف ہیں۔ یہ شائد انکی مجبوری ہے۔ وہ باہر نہیں نکلنا چاہتے اور نا ہی پیچھے رہ جانا چاہتے ہیں عجیب و غریب کشمکش میں زندگی گزر رہی ہے۔

دوسری جانب، باہر نکل جانے والا مینڈک بھی اپنے اصل کو چھوڑنا نہیں چاہتا۔ وہ نکلنے کے بعد بھی خود کو ویسا ہی دیکھنا چاہتا ہے جیسا وہ کنویں میں تھا۔ پر مجبور ہے۔ وہ کنویں سے باہر نکل کر بھی پیچھے نہیں رہ جانا چاہتا۔ اسی لئے وہ خود کو نہ چاہتے ہوئے بھی تبدیل ہوتا ہوا دیکھ رہا ہے۔ وہ شائد کبھی لوٹ کر جانا چاہتا ہے۔ پر باہر کی دنیا کی رنگینیوں میں کھو سا چکا ہے۔ شائد وہ کبھی لوٹ کر جاتا بھی ہے پر کنویں میں رہ جانے والے مینڈکوں کی نظریں اسکو واپس دنیا میں آنے پر مجبور کر دیتی ہیں۔

پیچھے رہ جانے والے مینڈک کبھی اسکو فخر سے دیکھتے ہیں اور کبھی حقارت سے۔ فخر اس لئے کہ وہ ان جیسا تھا اور اب نہیں ہے اور یقینا حقارت بھری نظروں کے پیچھے بھی یہی حقیقت ہے۔ اس کے لئے شائد واپیس آنا مشکل ہوتا جا رہا ہے۔ یہ مینڈک بھی اوروں کی طرح کنواں ہمیشہ کے لئے چھوڑ دے گا۔ پیچھے رہ جانے والے مینڈک کبھی یہ تسلیم نہیں کریں گے کہ باہر کی دنیا ان کے کنویں سے کہیں زیادہ بڑی اور بہتر ہے۔ ان کے لئے انکا ٹھکانہ ہی سب سے بڑا اور حسین ہے۔ وہ اسی کنویں کو اپنا سب کچھ سمجھتے رہیں گے۔





Kunwein ka maindak kunwein se bahar nikal chuka hai. Pareshan to nahi zyada pr kabhi kabhi bahar ki dunya dekh kr ghabra sa jaata hai.Kunwa acha tha pr usko dunya dekhni thi. Ab kunwein me rehney waley maindak akailey par gaye hein. Kuch bahar sar nikaal kr kabhi kabhaar dekhtey to hein pr dil me bahar aaney ki khwahish nahi rakhtey. Kunwein k bahar ki dunya se kuch khofzada se lagtey hein. Unko shayed kuch dar sa hai k agar wo bahar nikley to kahi unka thikaana na chutt jaye. Apna thikaana to sbko he pyara hota hai. Pr bahar ki dunya bhi dekhney me bohat haseen lagti hai. Thikaana chutt jaaney ka khof aur bahar ki dunya ki rangeenya ajeeb kushmakash me daaley huye hein.
Na kunwein se nikal jaaney waala maindak mutmain hai aur na he peechey reh jaaney waaley. Wo sab shayed khush to hein, apni apni jagah, laikin mutmain nahi hein. Ajeeb o ghareeb halaat hein. Kunwein se nikal janey wala maindak khud ko bahar ki dunya k mutaabiq tabdeel krney me masroof hai aur peechey reh jaaney waley maindak kuch kuch bahar nikal jaaney waley maindak k rang dhang me dhaalney me masroof hein. Yeh shayed unki majboori hai. Wo bahar nahi niklna chaahtey aur na he peechey reh jaana chahtey hein. Ajeeb o ghareeb kahsmakash me zindagi guzar rahi hai.
Dusri janib, bahar nikal jany wala maindak bhi apne 'asal' ko chorna nahi chahta. Wo niklney k baad bhi khud ko wesa he dekhna chahta hai jesa wo kunwein me tha. Pr majboor hai. Wo kunwein se bahar nikal kr bhi peechey nahi reh jaana chahta. Isliye wo khud ko na chaahtey huey bhi tabdeel hota hua dekh raha hai. Wo shayed kabhi laut kr jaana chahta hai. Pr bahar ki dunya ki rangeeniyo me kho sa chuka hai. Shayed wo kabhi laut kr jaata bhi hai. Pr kunwein me reh jaaney waley maindako ki nazrein usko wapis dunya me aney pr majboor kr deti hein.
Peechey reh jaaney waley maindak kabhi usko fakhar se dekhtey hein aur kabhi haqaarat se. Fakhar isliye k wo un jesa tha aur ab nahi hai aur yaqeenan, haqarat bhari nazro k peechey bhi yehi haqeeeat hai. Usk liye shayed wapis aana mushkil hota ja raha hai.Yeh maindak bhi auro ki tarah kunwa humesha k liye chor dey ga. Peechey reh jaaney waley maindak kabhi yeh tasleem nahi krein ge k bahar ki dunya unk kunwein se kahiii zaada bari aur behtar hai. Unk liye unka thikaana he sabb se bara aur haseen hai. Wo usi kunwein ko apna sab kuch samjhtey rhein ge.

Urdu Text Courtesy: Rai M. Azlan

14 comments:

  1. bohat he aala tareeqa istemal kia! :)

    ReplyDelete
  2. noor ul ann buttJuly 31, 2012 at 1:49 AM

    i v nice concept and has been portrayed beautifully by u .. thumbs up! :)

    ReplyDelete
  3. noor ul ann buttJuly 31, 2012 at 1:52 AM

    it seems as if we've got our 21st century shakespear again its a huge compliment 4 u :) ... anxiously waiting 4 ur nxt post!

    ReplyDelete
  4. Bohat Umda :) Logoon Ka Hosla Barhanay Aur Batlanay K Liye K Es Jahan Se Aagay Jahan Aur Bhi Hain Aur Woh Jo Khawab Dekhen Pora Bhi Kar Sakte Hain Agar RAB Ki Aata Ki Gayi Salahiyaton Pe Pora Yaqeen Ho Tu...
    Jazak-al-ALLAH-al-Khair Itni Achi Likhayi Bantnay Ka Hamaray Sath :)
    Acha Acha Likhte Rahiye Aur Muskurahtein Aur Roshniyaan Phailatey Rahiye :)

    ReplyDelete
  5. hey Sara thats a fantastic writeup, maza aa gaya parh k ... ore iesa lag raha hay k tum nay life ko bahut closely study kya hay ore baray minutely study kya hay ore uss kay bad kammal tareeqay sy tum apni observations ko transform karti ho ore jese jese tum zyada likhti jaa rahi ho manshalah maturity barhti jaa rahi hay .... Allah tumhien iek din bahuut bara writer banay ga :)

    ReplyDelete
  6. Sara,

    DUNIYAA KI HAQEET BAHUT HI BARHIYAA SE KAHI HAI.

    Take care

    ReplyDelete
  7. Mujy kion lag rha hay k kain bhi aik mendak hoon jo do saal pehly kunwain se bahir aa gya tha. Aor kuch aisa he mehsoos kar rha hoon jesa wo daddu kar rha hy kahani main

    ReplyDelete
  8. very well written as observed.. its very touching... Keep it up...

    ReplyDelete
  9. Amazing post sara. I really enjoyed it. mjy bhttttt maza aya.ap ki observation wakai m lajawab hai MashaAllah




    Ghazala Sajid

    ReplyDelete
  10. Sara,

    This is to wish EID MUBARAK to you all.

    Take care

    ReplyDelete
    Replies
    1. Eid Mubarak, Sir! Thanks a lot for all the kind comments on all my posts.

      Delete
  11. nice,very different style, y wo haqiqat hai jo hum sab ki life ka hisa hai laken hum may koi bi is k barai may nahi sochta. balke ignore krty hi chaly jaty hain. mujy b aj feel hua k mairi mesal b esi maindak ki tarah hai jo bahar akar enjoy karna chahta hai laken per b badlna nahi chahta.

    ReplyDelete
  12. Sara,

    EID MUBARAK to all of you.

    Take care

    ReplyDelete